جہاں روضہ پاک اے خیرالورای ہے

جہاں روضہ پاک اے خیرالورای ہے
وہ جنت نہیں ہے تو پِھر اور کیا ہے
کہاں میں کہاں یہ مدینےکی گلیاں
یہ قسمت نہیں ہے تو پِھر اور کیا ہے
محمد کی عظمت کو کیا پوچھتے ہو
كے وہ صاحب اے کعبہ قوسین ٹھہرے
بشر کی سرے عرش مہمان نوازی
یہ عظمت نہیں ہے تو پِھر اور کیا ہے
جو آسی کو کملی میں اپنے چھپا لے
جو دشمن کو بھی زخم کھاکر دعا دے
اسے اور کیا نام دے گا زمانہ
وہ رحمت نہیں ہے تو پِھر اور کیا ہے
قیامت کا اک دن معین ہے لیکن
ہمارے لیے ہر نفس ہے قیامت
مدینے سے ہم جاں نثاروں کی دوری
قیامت نہیں ہے تو پِھر اور کیا ہے
تم اقبال یہ نعت کہہ تو رہے ہو
مگر یہ بھی سوچا كے کیا کر رہے ہو
کہاں تم کہاں یہ مدح ممدوع یزداں
یہ جرات نہیں ہے تو پِھر اور کیا ہے

Jahan Rozae Pake KHerul Wara He
Wo JanNaat Nahi He To Phir Aur Kya He
Kahan Mai Kahan Yeh Madine Ke Galiyan
Yeh Qisamt Nahi He To Phir Aur Kya He
Muhammed Ki Azmath Ko Kya Poochte Ho
Ke Wo Sahibe Qaba Qausain Tehre
Bashar Ki Sare Arsh Mehman Nawazi
Yeh Azmath Nahi He To Phir Aur Kya He
Jo Asi Ko Kamli Me Apne Chupa Le
Jo Dushman Ko Bhi Zakhm Khakar Dua De
Use Aur Kya Nam Dega Zamana
Wo Rehmat Nahi He To Phir Aur Kya He
Qeamat Ka Ek Din Muaiyan He Lekin
Hamare Liye Har Nafas He Qeamat
Madine Se Hum Jan Nisaraun Ki Doori
Qeamat Nahi He To Phir Aur Kya He
Tum Iqbal Yeh Naat Kehto Rahe Ho
Magar Yeh Bhi Soncha Ke Kya Kar Rahe Ho
Kahan Tum Kahan Madhe Mamduhe Yazdan
Ye Jurrat Nahi He To Phir Aur Kya He