محبوب کی محفل کو محبوب سجاتے ہیں

محبوب کی محفل کو محبوب سجاتے ہیں
آتے ہیں وہی جن کو سرکار بلاتے ہیں
وہ لوگ خدا شاہد قسمت کے سکندر ہیں
جو سرور عالم کا میلاد مناتے ہیں
سرکار کی رحمت کا اندازہ نہیں ان کو
جو ہم کو جہنم سے دن رات ڈراتے ہیں
جن کا بھری دنیا میں کوئی بھی نہیں والی
ان کو بھی میرے آقا سینے سے لگاتے ہیں
مے خوارو ذرا جانا مے خانہ سرور میں
وہ جام کرم اب بھی بھر بھر کے پلاتے ہیں
بیمار مدینہ کا ادنی سا کرشمہ ہے
ہر روز مدینے میں ہم عید مناتے ہیں
اللہ کے خزانوں کے مالک ہیں نبی سرور
یہ سچ ہے نیازی ہم سرکار کا کھاتے ہیں

mehboob ki mehfil ko mehboob sajaate hain
atay hain wohi jin ko sarkar bulatay hain
woh log kkhuda Shahid qismat ke Sikandar hain
jo survare aalam ka milaad manate hain
sarkar ki rehmat ka andaza nahi un ko
jo hum ko jahannum se din raat darate hain
jin ka bhari duniya mein koi bhi nahi wali
un ko bhi mere aaqa seenay se lagatay hain
me khawaro zara jana me khanah suroor mein
woh jaam karam ab bhi bhar bhar ke pilate hain
bemaar madinah ka adna sa karishma hai
har roz madeeney mein hum eid manate hain
Allah ke khazanon ke maalik hain nabi sarwar
yeh sach hai niazi hum sarkar ka khatay hain